سارے کام کاج چھوڑ و اور یہ وظیفہ کر لو

ارے کام کاج چھوڑو اور یہ وظیفہ کر لو فوری عرش سے مدد آ جائے گی بڑی سے بڑی حاجت پوری ہو گی۔ پریشانی کا خاتمہ ہوگا۔ حضرت علی کا فرمان ہے: ہر اس چیز کو توڑ دو جس کو انسان نے بنا یا ہے لیکن انسان کا دل کبھی مت توڑنا جس کو اللہ نے بنا یا ہے۔ آج میں آپ کی نظروں کے سامنے ایک شاندار وظیفہ پیش کر وں گا۔ جس کو پڑھتے ہی فوری عرش سے مدد آ جائے گی۔ دیکھا جائے تو ہر کوئی کسی نہ کسی غم میں مبتلا ہے کسی کو گھر یلو الجھنوں کا غم ہے تو کسی کو کاروباری بندش کا غم کسی کو رزق و دولت کی تنگی کی پریشانی ہے تو کسی کو بیماری نے آپکڑا ہے کوئی اپنی حاجت پوری نہ ہونے کی وجہ سے رنج و غم میں ہے تو کوئی جادو جنات کا شکار ہے۔

الغرض ہر شخص کسی نہ کسی رنج و غم اور پریشانی کا شکار ہے اگر آپ بھی اسی طرح کے مسائل کا شکار ہیں تو آج کا یہ وظیفہ خاص کر آپ کے لیے ہے۔ آپ اس وظیفے کپر پختہ یقین رکھتے ہوئے عمل کر یں اور فوری اللہ تعالیٰ کی مدد حاصل کر یں۔ عمل اور ضروری ہدایات: یہ وظیفہ آپ نے نمازِ ظہر کے بعد کر نا ہے اور دُرودِ کما لیہ کو اکیس مرتبہ پڑ ھنا ہے آخر میں اللہ پاک سے دعا مانگنی ہے اس عمل کو ستراں روز تک کر نا ہے۔ ان شاء اللہ اللہ آپ کو تمام پر یشانیوں سے نجات عطا کرے گا۔ اللہ آپ کے رزق و دولت میں بے پناہ وسعتیں اور بر کتیں عطا فر ما ئے گا۔

اللہ آپ کو اتنا عطا کرتے گا کہ آپ کو کبھی کسی کے آ گے ہاتھ پھیلانے کی ضرورت نہ پڑے گی۔ اللہ ہم سب کو ہماری اوقات کے مطا بق نہیں بلکہ اپنی شان کے مطا بق نعمتیں عطا فرما ئے وظیفہ کرنے سے پہلے پہلے کچھ نہ کچھ صدقہ و خیرات کر لیا کر یں۔ یہ جو وظیفہ میں نے آپ کو بتا یا ہے یہ بہت ہی مجرب وظیفہ ہے اور اس وظیفہ کی مدد سے آپ ہر طرح کی مشکل کا سا منا کر سکتے ہیں اور اس مشکل کو حل کر سکتے ہیں۔ بڑی بڑی حاجات پوری ہو جائیں گی۔ ہر طرح کی وظیفہ انسان کی بہتری کے لیے ہی ہوتا ہے اور اللہ پاک کی ذات اتنی رحمت والی ہے کہ وہ ہر صورت اپنے بندے کی رہنمائی ہی چاہتا ہے۔ اور ہر طرح کی مشکل میں انسان کی رہنمائی کر نے میں پیش پیش ہوتا ہے اللہ پاک اپنے بندے کو مشکلات میں ڈالتا تو ہے ہی مگر ان مشکلات سے نکلنے کے لیے بھی کوئی نہ کوئی حل بتا دیتا ہے سامنے رکھ دیتا ہے اور حل وظیفوں کی صورت میں سامنے لا دیتا ہے

About admin

Check Also

بو علی سینا اور لڑکی

کہتے ہیں کہ قدیم زمانے میں ایک رئیس کی بیٹی گھوڑا سواری کے دوران گھو …

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *